جدت کا انکار کیوں۔۔۔سانوؔل عباسی

ہر دور کے مسائل و ترجیحات مختلف ہوتے ہیں سماجی حالات و مسائل اپنا ارتقائی سفر طے کرتے ہوئے فی زمانہ جس نہج پہ آتے ہیں ان حالات کی بہتری و مسائل کے حل کے لئے اصلاحات کا بھی بعینہ اسی ارتقائی سفر سے گزرنا لازم ہے اور یہی جدت کہلاتی ہے

غلطی سے ہمارے نزدیک جدت کو روایات کا انکار سمجھا جاتا ہے اور جدت اگر انکار کی شکل میں سامنے آئے گی تو زمانی و فکری عدم مطابقت کی بنیاد پر جس طرح روایات کا انکار کر کے جدت کو پیش کیا جاتا ہے ٹھیک اسی طرح جدت کا بھی انکار کر دیا جاتا ہے اور جب تک یہ جدت اپنا ارتقائی سفر طے کر کے مطلوبہ معیار تک نہیں پہنچتی سماج کا جزو نہیں بن پاتی جسکا نتیجہ یہ ہوتا ہے کہ سماج ماضی کے دھندلکوں میں گم ہو جاتا ہے فکری ارتقاء مفقود ہوتا ہے اور سماج ہر حوالے سے پستی و تنزلی کا شکار ہو جاتا ہے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے